12.07.2018

 عدلیہ مکسد ایش انت کہ انصافئ لوٹگانا پورہ کنت و بہ جمھوریتئ تھا بنیادمین آئین، حک و وقار و بیانئ آزاتئ ساتوک و نگھوان عدلیہ انت۔ مگہ بہ پاکستانئ مُلکئ تھا عجیبین ھبر ایش انت کہ پاکستانئ عدلیہ کاروائی ھر وھدہ مشکوک انت و ھر وھدہ بہ آئ سرا الزام جتگ بیت کہ آ بہ پوجئ فشارئ چیرا کائیت و رندا فیصلہ کنت و مزنترئ مثال ایش انت کہ آ ھر وھدہ پوجین جنرلانی بغاوتانا جواز داتگیت۔ عدلیہ ھر وھدہ ای ھبرا چمئ چیرا نہ گپتگیت کہ فھما بغاوتئ کہ شہ پوجئ نیمگا تسر بنت بھرحال کانونئ پروشتن انت، و شہ مُچان حیرانئ وڑئ ھبر ایش انت کہ تہ نون بہ مُچین بغاوتان کہ بہ ای مُلکئ تھا تسر بوتگنت پاکستانئ مزنتری عدالت، استرہ محکمہ ھر بغاوتئ را زرورتئ وڑ قرار داتگیت و ای راز پوج تہ دیرین وھدہ بہ اقتدارئ سرا وتی قبضہ ساتتگنت۔ ای راز اگہ سیل کننت پاکستانئ تاریخئ نیمئ وھدہ بہ پوجین حکومتئ چیرا تسر بوتگیت، مگہ بہ گیچئن بوتگین حکومتانی وھدہ ھم بہ پاکستان سیاہ و اسپیت آ پوجئ اقتدار بوتگیت۔ بیدئ ای پوجین بغاوتانی جائز کنگا دیگہ وڑئ گام ھم شہ عدلیہ نیمگا زورتگ بوتگنت کہ شہ آئ ای معلوم بیت کہ آ پوجی حکمرانانی فشارئ چیرا کائیت و رندا فیصلہ کنت۔ گڈین سرئ وزیر ذولفقار علی بھٹوئی دار جنگئ حکم ھم یک مثال انت۔ 
جنرل ضیاء الحق نہ تھانکا آوانی تختا چپی کرتہ اقتدارئ سرا قبضہ کرتنت بلکہ لوٹتنت کہ آوانا شہ وتی راھئ سرا یک نیمگ کننت و بہ ھمی بھرا یک قتلئ مقدمہ ھم جور کرت و پہ آئ دار جنگئ حکمئ ھم شہ عدلیہ نیمگا دات۔ بہ مقدمہ کاروائی وھدہ پوجئ گیر دیانت دارانہ ئن رویہ روکین وڑئ درا بوت کہ حتئ بھٹوئی یک سیاسین حریفئ جسٹس جاوید اقبال ھم گشتنت کہ ای قتلئ مقدمہ نہ انت بلکہ مقدمہ قتل بوتگیت۔ دیگہ ھبرئ ھم یات کنگئ وڑ انت کہ وھدہ کہ ھبر بہ پاکستانئ پوجیانی سرا کائیت و آ گجام گیرکانونین کارئ کننت پاکستانئ عدلیہ سستین وڑئ کاروائی کنت و گجام گناھکارئ را جزا نہ دنت۔ بہ ۱۹۹۰ سالا پاکستانئ پوج، ایجنسی و بینکئ یک مزنئن اپسرئ یکجا بوتنت و پہ بی نظیر بھٹوئی دور کرتنا شہ سیاستا گام زورتنت و آئ سیاسین حریفانا بہ یک پلیٹ فارمئ سرا یکجا کنگئ سرا مزن مزنئن کچانہ زر داتنت۔ یک ریٹائرڈ ایئر مارشال بہ اصغر خان ناما شہ ای تفصیلاتا پہ استرہ محکمہ ھال دات و چُنتی وار بری بھرا آی را سرپھد کرت مگہ گجام کاروائی بری بھرا تسر نہ بوت۔ چُنتی سال رندا یعنی کہ چُنت سال دیما بہ استرہ محکمہ تھا ای سرگل پھدا بہ دیما ات۔ چُنت مردمانی جرم ثابت بوت، چُنت مردم اقبال جرم کرتنت مگہ عدالت بہ سزائ دیگا پہ گناھکاران پہ دوارگ بی سوب منت۔
بہ ای ھبرانی وھدہ یک دلچسپین ھبرئ کہ بہ دیما کائیت ایش انت کہ ای راز معلوم بیت کہ بہ پاکستانئ آیوکین کومین اسمبلئ گیچئن کاریانی تھا کہ بہ جولائ بیست و پنچمی تاریخا تسر بیگا انت یک نیمگا گڈین سرئ وزیر واجہ نواز شریف، آوانی گل و آوانی نیمہ دار انت و بہ آوانی دیما عمران خان، پوجئ سربراہ جنرل باجوا و چیف جسٹس ثاقب نثار انت۔ یکئ شہ عمران خانئ گلئ نمایندگان بہ وتی گیچئن کارئ پوسٹرانی تھا گون افتخار عمران خان، جنرل قمر باجوا و ثاقب نثارئ عکسانا شامل کرتتیت۔ گیچئن کارئ کمشن بھر حال ای نمایندگا نا اھل کرت۔ مگہ شہ ای دپ دیگا ای ھبرئ کچانہ شرّین وڑئ جتگ بیت کہ عمران خان، ھور گون پوج و عدلیہ بہ گیئچن کاریانی تھا یکجا انت۔ عدلیہ وت بہ مُچانی دیما ای رازئ تصویرئ شہ وت جور کرتگیت۔