ریڈیوفیچر:نقشِ پا چھوڑ گئے ہم تو جدھر سے گزرے

حسرت موہانی

ہندوستان کی تاریخ میں ایک ایسا بھی سیاسی رہنما گزرا ہے جن کے سادگی کی مثال آج بھی دی جاتی ہے۔سرکاری بنگلہ چھوڑ کر مسجد میں رہنے والے ،ہوائی جہاز کے بجائے ریل کے تھرڈ کلاس ڈبے میں سفر کرنے والے اس عظیم ممبر پارلیمنٹ کو ہم حسرت موہانی کے نام سے جانتے ہیں۔حسرت موہانی کی شخصیت واقعتا ہمہ جہت شخصیت تھی ۔ سیاسی ،سماجی اور بطور خاص ادبی اعتبار سے ہمیشہ حسرت موہانی کو یاد کیا جاتا رہا ہے اور آگے بھی یاد کئے جاتے رہیں گے۔لازوال اور بے مثال اردو شاعری کے خالق حسرت موہانی کی زندگی کے مختلف گوشوں پر مبنی آل انڈیا ریڈیو کی اردو سروس کا خصوصی فیچر’نقشِ پا چھوڑ گئے ہم تو جدھر سے گزرے‘آپ کی خدمت میں پیش ہے