امریکی صدر کی شمالی کوریا کو ایک اور سخت وارننگ، چین کی تحمل سے کام لینے کی اپیل

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے شمالی کوریا کو تازہ وارننگ دیتے ہوئے کہا کہ اگر پیانگ یانگ نے امریکہ یا اس کے کسی حلیف کے خلاف حملہ کرنے کا تصور بھی کیا تو اس ملک کا وہ حال کردیا جائے گا جو اس نے کبھی سوچا بھی نہ ہوگا۔  منگل کو شمالی کوریا کی امریکہ کو دی گئی دھمکی کے بارے میں اپنے بیان میں جس میں انہوں نے کہا کہ امریکہ  اینٹ کا جواب پتھر سے دے گا۔ انہوں نے کہا کہ اب پیغام سے کام نہیں چلے گا، بلکہ اب عمل کرنے کا وقت آگیا ہے۔ صدر ٹرمپ منگل کو دیے گئے اپنے بیان کے بارے میں پوچھے گئے سوال  کا جواب دے رہے تھے۔ ان کے اس بیان کی خارجہ پالیسی سازوں اور جمہوریہ قانون سازوں نے تنقید کی ہے۔

دوسری جانب چین نے امریکی صدر سے ضبط و تحمل سے کام لینے کی اپیل کی ہے۔ چین کے صدر شی جن پنگ نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ سے فون پر شمالی کوریا کے جوہری میزائل پروگرام پر تبادلہ خیال کیا اور معاملے کو پرامن طریقے سے حل کرنے پر زور دیا۔ چین کے سرکاری ٹیلی ویژن نے یہ اطلاع دی۔ مسٹر جن پنگ نے کہا کہ جزیرہ نما کوریا میں امن برقرار رکھنے کے علاوہ اس کو جوہری سے پاک کرنا چین اور امریکہ دونوں کے مفاد میں ہے۔