روہنگیا معاملہ: امریکی ایوان نمائندگان نے نسلی تطہیر کی مذمت کی

امریکی ایوان نمائندگان نے روہنگیا مسلمانوں کے نسلی تطہیر کیے جانے کی مذمت کرتے ہوئے ایک قرار داد منظور کی ہے۔ قرار دار میں یہ بھی زور دے کر کہا گیا ہے کہ رخائن ریاست میں انسانی ہمدردی کا کام فوری طور پر بحال کیا جائے، جہاں بےچینی پھیل جانے کی وجہ سے چھ لاکھ سے زیادہ روہنگیا مسلمانوں کو بچ کر بنگلہ دیش بھاگ جانا پڑا۔ ایوان نے میانما کی قیادت سے کہا ہے کہ وہ شمالی رخائن ریاست میں اقلیتوں پر حملوں کو بند کرے۔ ایوان کے جمہوری وہپ اسٹینی ہو یئر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ جمہوریت کو بحال کرنے کے ، برما کی قیادت کی طرف سے کئے گئے وعدے کو اِس معیار پر پرکھا جائے گا کہ تمام لوگوں کے عقائد اور نسلی اعتبار سے اُن کے انفرادی حقوق اور آزادی کے تئیں، آیا احترام کیا جاتا ہے؟ قرار داد میں آنگ سان سوچی سے زور دے کر یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ اپنی اخلاقی قیادت کا استعمال کریں۔