سکھ مخالف فسادات: 186 بند معاملوں کی جانچ کیلئے نئی تحقیقاتی ٹیم کی تشکیل

سپریم کورٹ نے 1984 کے فساد کے 186 کیسوں کی مزید تحقیقات کی نگرانی کے لیے تین ارکان کی ایک خصوصی جانچ ٹیم ایس آئی ٹی تشکیل دی ہے جس کے سربراہ دلّی ہائی کورٹ کے سابق جج جسٹس ایس این ڈھینگرہ ہوں گے۔ جسٹس ڈھینگرہ کے علاوہ موجودہ آئی پی ایس افسر ابھیشیک دلار اور آئی جی رتبے کے ریٹائرڈ افسر راج دیپ سنگھ ایس آئی ٹی میں شامل ہوں گے۔

چیف جسٹس دیپک مشرا کی سربراہی والی بنچ نے ایس آئی ٹی سے کہا ہے کہ وہ دو مہینے کے اندر اندر اپنی کارروائی رپورٹ پیش کرے۔ اب اس معاملے کی سماعت 19 مارچ کو ہوگی۔ عدالت عالیہ نے کل یہ کہا تھا کہ سابقہ خصوصی جانچ ٹیم ایس آئی ٹی نے اُن 186 کیسوں کی مزید چھان بین نہیں کی جن میں کیس بند کرنے کی رپورٹیں داخل کی گئی تھیں۔ 1984 میں اُس وقت کی وزیراعظم اندرا گاندھی کے قتل کے بعد قومی راجدھانی دلّی میں بڑے پیمانے پر فساد بھڑک اٹھا تھا۔