دہشت گردی اور بات چیت ایک ساتھ ممکن نہیں: بھارت

بھارت نے یہ بات صاف کردی ہے کہ دہشت گردی اور بات چیت ایک ساتھ نہیں چل سکتے۔ ساتھ ہی اس نے یہ بھی کہا کہ وہ دہشت گردی سے پاک ماحول میں پاکستان کے ساتھ گفتگو کے لئے تیار ہے۔ وزیر خارجہ سشما سوراج نے نئی دلی میں ایک تقریب میں اظہار خیال کرتے ہوئے یہ بات کہی۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسلام آباد کو دہشت گردی کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کرنی چاہئے اور اگر وہ نئی دلی کے ساتھ گفتگو کرنا چاہتا ہے تو اسے بھارت کے خلاف دہشت گردی کو روکنا ہوگا۔ محترمہ سوراج نے کہا کہ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ وزیر اعظم عمران خان ایک مدبر ہیں۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ اگر جناب خان اتنے فراخ دل ہیں تو انہیں جیش محمد کے سربراہ مسعود اظہر کو بھارت کے حوالے کردینا چاہئے۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان دہشت گردی کے معاملے پر عالمی برادری کو گمراہ کررہا ہے اور وہ دہشت گردی کی حوصلہ افزائی اور دہشت گردوں کو پناہ دے رہا ہے۔