15.07.2019 جہاں نما

کرتارپور کوریڈور پر جھکا پاکستان، پانچ ہزار عقیدتمندوں کو بغیر ویزا کرتارپور صاحب گرودوارہ جانے کی اجازت

کرتارپور صاحب کوریڈور معاملہ پر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان اتوار کو واگہہ سرحد پر ہوئی بات چیت میں پاکستان نے ہندوستان کے زیادہ تر مطالبات مان لئے۔ اسلام آباد اس بات کے لئے راضی ہوگیا ہے کہ بغیر ویزا ہندوستانی پاسپورٹ ہولڈر پانچ ہزار عقیدتمند روزانہ کرتارپور جاسکیں گے ۔ بیرون ملک رہنے والے ہندوستانیوں کو بھی ویزے کی ضرورت نہیں ہوگی۔اس خبر کو تمام اخبارات نے اپنے کالموں میں خاص جگہ دی ہے۔ اس خبر کے حوالے سے اخبار ایشین ایج تحریر کرتا ہے کہ پاکستان کے دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر شاہ محمد فیصل نے میٹنگ کے بعد اخبار نویسوں کو بتایا کہ تقریباً 80 فیصد معاملوں پر دونوں ملکوں کے درمیان اتفاق ہوگیا ہےا ور باقی 20 فیصد مسئلوں کے حل کے لئے ایک اور میٹنگ کی ضرورت ہوگی۔نئی دہلی نے اس بارے میں اسلام آباد کو ایک ڈوزیئر سونپا ہے۔ میٹنگ کے دوران دونوں جانب تعمیر ہورہے مختلف ڈھانچہ جاتی کاموں کے جائزہ کے ساتھ ساتھ عقیدتمندوں کی آمدورفت کے طریقۂ کار سے متعلق معاہدے کے مسودے پر بھی تبادلۂ خیال کیا گیا۔ وزارت خارجہ کے مطابق دونوں فریقوں نے گزشتہ مارچ ، اپریل اور مئی میں تکنیکی ٹیموں کے درمیان تین دور کی بات چیت میں باہمی رضامندی کی بنیاد پر اب تک ہوئے کاموں کا بھی جائزہ لیا۔ عقیدتمندوں کے دورے کے دوران پاکستان میں موجودہ عناصر کے ذریعہ نقصان پہنچائے جانے کا مسئلہ اٹھائے جانے پر پاکستان نے یقین دہانی کرائی کہ وہ کرتارپور راہداری اور اس عمل سے متعلق معاملے میں اپنی سرزمین کو ہندوستان مخالف سرگرمیوں کے لئے استعمال ہونے کی اجازت نہیں دے گا۔ ہندوستان نے پاکستان کے ذریعہ راہداری کو جوڑنے کے لئےپل کے بجائے مٹی کا بند بنانے کی پاکستانی تجویز پر اپنی فکر مندی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس سے ڈیرا بابا نانک صاحب اور ارد گرد کے علاقوں میں سیلاب کا پانی بھرجائے گا جس سے عقیدتمندوں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ نئی دہلی کا کہنا تھا کہ یہ بند عارضی طور پر بھی نہیں بنایا جانا چاہئے۔ ہندوستان اپنی جانب ایک پل بنا رہا ہے اور  وہ چاہتا ہے کہ پاکستان بھی اس طرح کا پل بنائے تاکہ عقیدتمندوں کو پریشانی نہ ہو۔ پاکستان نے اس پر اصولی طور پر رضامندی کا اظہار کیا ہے۔

تباہ حال پاکستان پر 6 ارب ڈالر کا جرمانہ

2۔ کنگالی کی حد تک پہنچ رہے پاکستان کو عالمی بینک کی بین الاقوامی عدالت نے کافی زبردست جھٹکا دیا ہے۔ عدالت نے کانکنی سے متعلق ایک تنازعہ میں فیصلہ سناتے ہوئے اس پر 5 اعشاریہ نو سات چھ ارب ڈالر کا جرمانہ لگایاہے۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے۔ اس خبر کے حوالے سے روزنامہ دی ٹریبیون لکھتاہے کہ یہ کسی معاملے میں لگے سب سے زیادہ جرمانوں میں سے ایک ہے۔ اس معاملہ میں پاکستانی حکومت نے 2011 میں ریکوڈک پروجیکٹ میں ایک کمپنی کو کانکنی کا ٹھیکا دینے سے غیر قانونی طریقے سے انکار کردیا تھا۔ اس معاملے میں تیتھیان کاپر کمپنی نے چلی کی کانکنی کی کمپنی اینٹوفگاستا اور کناڈا کے بیرک گولڈ کارپوریشن کے ساتھ بین الاقوامی عدالت سے رجوع کیا تھا۔ ٹی سی سی کی کانکنی کی عرضی پاکستانی صوبے بلوچستان کی حکومت نے خارج کردی تھی۔ بین الاقوامی عدالت نے 700 صفحے کے آرڈر میں پاکستان پر 4 اعشاریہ صفر آٹھ ارب ڈالر کا جرمانہ اور اس پر ایک اعشاریہ آٹھ سات ارب ڈالر کا سود عائد کیا ہے۔کمپنی اور پاکستانی حکومت کے درمیان سات سال تک چلے مقدمے کے بعد یہ فیصلہ آیا ہے۔ کمپنی نے اس مقدمہ میں 11 اعشاریہ چار تین ارب ڈالر کے نقصان کا دعویٰ کرتے ہوئےعدالت سے یہ رقم پاکستانی حکومت سے دلوانے کی مانگ کی تھی۔ بین الاقوامی عدالت کا تازہ فیصلہ پاکستان کے لئے بڑی مشکل سے کم نہیں ۔ وہ دوست ملکوں اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ سے قرض لے کر اپنی معاشی مشکلات کو کسی طرح حل کرنے کی کوشش کررہا ہے۔اسی دوران وزیر اعظم عمران خان نے پورے معاملے کی جانچ کے لئے ایک کمیشن قائم کرنے کا حکم دیا ہے۔ یہ کمیشن جانچ کرکے بتائے گا کہ ریکوڈک معاملے میں پاکستان کو اتنا بڑا نقصان کیسے ہوا۔

سابق برطانوی سفیر کے میمو کے مطابق ٹرمپ نے اوبامہ کو تکلیف پہنچانے کے لئے ایران سےختم کیا تھا ایٹمی معاہدہ

امریکہ میں برطانیہ کے سابق سفیر کے لیک ہونے والے میمو کے مطابق صدر ڈونل ٹرمپ نے سابق صدر براک اوبامہ کو غصہ دلانےا ور انہیں تکلیف پہنچانے کے لئے ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ کو ختم کیا تھا۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے بڑے نمایاں طو رپر شائع کیا ہے۔ معروف اخبار میل آن سنڈے کا حوالہ دیتے ہوئے روزنامہ ٹائمز آف انڈیا تحریر کرتا ہے کہ برطانوی سفیر کم ڈروچ نے صدر ٹرمپ کے اس اقدام کو ‘‘ سفارتی غارت گری’’کے عمل سے تعبیر کیا تھا۔ اس میں کہا گیا ہے کہ یہ میمو 2018 میں ا س وقت بھیجا گیا جب برطانیہ کے اس وقت کے وزیر خارجہ بورس جانسن نے امریکہ سے اپیل کی تھی کہ وہ ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ پر قائم رہے۔ جناب کم نے لکھا کہ بظاہر صدر ٹرمپ اس معاہدے کو شخصی وجوہات کی بنا پر ختم کرنا چاہتے تھے کیونکہ اس معاہدے کو ان کے پیش رو براک اوبامہ نے  طے کیا تھا۔ برطانوی سفیر نے امریکی صدر کے مشیروں کے درمیان اختلافات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا تھا کہ معاہدے سے دستبردار ہونے کی صورت میں وہائٹ ہاؤس کے پاس کوئی حکمت عملی نہیں ہے کہ وہ حالات سے کیسے نمٹے گا۔اسی دوران فرانس، برطانیہ اور جرمنی نے کہا کہ 2015 میں ایران کےساتھ کیا گیا جوہری معاہدہ ختم ہوسکتا ہے کیونکہ ایران اور امریکہ کے درمیان کشیدگی بڑھتی جارہی ہےا و ر وہ اسے ختم کرانے کی کوشش میں لگے ہوئے ہیں۔ انہوں نے معاہدے سے متعلق تمام ملکوں سے اپیل کی کہ وہ مذاکرات کی میز پر آکر آپسی تنازعہ کا حل تلاش کریں۔

پابندیاں اٹھالے تو امریکہ کے ساتھ بات چیت کیلئے تیار، ایرانی صدر کا بیان

ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ اگر امریکہ اپنی پابندیاں اٹھا کر 2015 کے معاہدے میں واپس آجائے تو تہران واشنگٹن سے بات چیت کرنے کے لئے تیار ہے۔ اس خبر کو روزنامہ دی انڈین ایکسپریس نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے۔ اس خبر کے حوالے سے اخبار تحریر کرتا ہے کہ اتوار کو ٹیلی ویژن پر اپنے خطاب میں صدر روحانی نے کہا کہ ان کا ملک بات چیت میں یقین رکھتا ہے اور اگر امریکہ اپنی تمام پابندیاں اٹھا لے اور معاہدے میں واپس آجائے تو تہران کبھی بھی اور کہیں بھی واشنگٹن کے ساتھ بات چیت کے لئے تیار ہے۔ ادھر صدر ٹرمپ کی انتظامیہ نے کہا ہے کہ وہ وسیع ترین جوہری معاہدے اور سکیورٹی معاملات پر ایران کےساتھ بات چیت کے لئے تیار ہے۔ لیکن ایران نے یہ بات واضح کردی ہےکہ بات چیت تبھی ممکن ہے جب اس پر سے پابندیاں اٹھا لی جائیں اور اسے اتنا تیل برآمد کرنے کی اجازت دی جائے جتنا وہ امریکہ کے معاہدے سے باہر ہونے سے پہلے کررہا تھا۔ ایران اور امریکہ کے درمیان کشیدگی اس قدر بڑھ گئی تھی کہ صدر ٹرمپ نے پچھلے مہینے ایران پر حملہ کرنے کا منصوبہ بنا لیا تھا تاہم صدر ٹرمپ نے آخری لمحوں میں اس منصوبے پر عمل نہ کرنے کا فیصلہ کرلیا۔

بنگلہ دیش کے سابق صدر حسین محمد ارشاد کا انتقال

بنگلہ دیش کے سابق صدر حسین محمد ارشاد کا کل ڈھاکہ میں 90 برس کی عمر میں انتقال ہوگیا۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے۔ اس خبر کے حوالے سے روزنامہ دی اسٹیٹس مین سابق صدر کے ایک مشیر کا حوالہ دیتے ہوئے تحریر کرتا ہے کہ حسین محمد ارشاد گزشتہ تین ہفتوں سے علیل تھے۔ انہیں زندگی بچانے والے آلات پر انتہائی نگہداشت میں دارالحکومت ڈھاکہ کے فوجی اسپتال میں رکھا گیا تھا۔ سابق فوجی حکمراں کو جگر اور گردوں کے عارضہ کا سامنا تھا۔ حسین محمد ارشاد نے فوج کے سربراہ کی حیثیت سے 24 اپریل 1982 کو اس وقت کے صدر عبدالستار کی حکومت کا تختہ الٹ کر حکومت پر قبضہ کرلیاتھا۔ انہوں نے اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد آئین کو بھی معطل کردیا تھا۔ دسمبر 1983 میں وہ صدر بن بیٹھے لیکن 6 دسمبر 1990 کو عوامی احتجاجات کے وجہ سے انہیں عہدہ چھوڑنے پر مجبور ہونا پڑا۔

سپر اوور کے بعد انگلینڈ نے جیتا کرکٹ کا پہلا عالمی کپ

عالمی کپ کرکٹ کے فائنل میں نیوزی لینڈ کو شکست دے کر انگلینڈ عالمی چمپئن بن گیا ہے۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے۔ اس خبر کے حوالے سے روزنامہ دی اسٹیٹس مین تحریر کرتاہے کہ انگلینڈ اور نیوزی لینڈ کے درمیان سنسنی خیز میچ مقررہ 50 اووروں میں برابر رہا جس کے سبب سپر اوور کے ذریعہ نتیجہ نکالنے کی کوشش کی گئی لیکن یہاں بھی میچ ٹائی رہا۔ لہٰذا باؤنڈریز کی بنیاد پر فیصلہ کیا گیا۔ انگلینڈ نے اس میچ میں کل 26 باؤنڈریز لگائیں جبکہ نیوزی لینڈ کے نام صرف 17 باؤنڈریز ہی رہیں۔ اس طرح انگلینڈ نیا چمپئن بن گیا۔ یہ عالمی کپ کرکٹ کی تاریخ میں پہلا موقع ہے جب کسی ٹیم نے فائنل میں سپر اوور کھیلا ہو۔ اس سے قبل نیوزی لینڈ نے مقررہ 50 اووروں میں آٹھ وکٹ پر 241 رن بنائے تھے۔ جس کے جواب میں انگلینڈ کی ٹیم بھی 50 اووروں میں 241 رن بنا کر آؤٹ ہوگئی۔ جس کے بعدمیچ سپر اوور میں گیا۔ سپر اوور میں بھی دنوں ٹیموں نے پندرہ پندرہ رن اسکور کئے۔ قابل ذکر ہے کہ پچھلی بار بھی نیوزی لینڈ فائنل میں آسٹریلیا سے ہار گیا تھا۔

ومبلڈن ٹینس چمپئن شپ میں جوکووچ نے پانچویں بار جیتا سنگلز کا خطاب

ادھر ومبلڈن ٹینس چمپئن شپ میں عالمی نمبر ایک کھلاڑی نوواک جوکووچ نے سنگلز کا خطاب جیت لیا ہے۔اس خبرکو تمام اخبارات نے اپنے کالموں میں خاص جگہ دی ہے۔ روزنامہ ہندوستان ٹائمس کے مطابق کل لندن میں کھیلے گئے ایک زبردست فائنل میں انہوں نے روجر فیڈرر کو سات-چھ، ایک- چھ، سات- چھ، چار – چھ اور سات – تین سے شکست دی۔  جوکووچ نے پانچویں بار یہ خطاب جیتا ہے۔