24.09.2019جہاں نما

وزیر اعظم کا اقوام متحدہ کی ماحولیاتی تبدیلی کانفرنس سے خطاب،کہا باتیں کرنے کا وقت ختم،اب کام کرنے کی ضرورت

۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے پیر کے روز نیو یارک میں اقوام متحدہ کی کلائمٹ ایکشن سر براہ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ باتیں کرنے کا وقت ختم ہو چکا ہے اور اب کارروائی کرنے کی ضرورت ہے۔اس خبر کو تمام اخبار ات نے نمایاں طور پر شائع کیا ہے۔اس خبر کے حوالے سے روزنامہ ٹائمز آف انڈیا تحریر کرتا ہے کہ جناب مودی نے کہا کہ ہمیں یہ تسلیم کر لینا چاہئے کہ ماحول کے تحفظ کے لئے ہم جو کچھ بھی کر رہے ہیں وہ کافی نہیں ہے۔ اس مسئلہ کے تئیں دنیا کا جو رویہ ہے صحیح معنوں میں اس میں تبدیلی کی ضرورت ہے۔انہوں نے تمام عالمی رہنماؤں سے ماحول کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے جلد از جلد قدم اٹھانے کی اپیل کی۔ جناب مودی نے کہا کہ بھارت ماحول کے تحفظ کے لئے قدم اٹھا رہا ہے۔ ہم نے پانی کے تحفظ کے لئے جل جیون مشن کی شروعات کی۔ بارش کے پانی کی ہارویسٹنگ پر بھی کام کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ چند سالوں میں بھارت پانی کے تحفظ سے متعلق کاموں پر 50 ملین ڈالر خرچ کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے لالچ کے تحت نہیں بلکہ ضرورت کے تحت تمام کارروائیاں کی ہیں۔ انہوں نے اعلان کیا کہ بھارت نے ایک بار استعمال کی جانے والی پلاسٹک پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا ہے اور امید ظاہر کی کہ دنیا اس سے سبق لے گی۔ انہوں نے کہا کہ بہت زیادہ بولنے سے بہتر ہے کہ تھوڑا سا کچھ کر کے بھی دکھائیں۔انہوں نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ اسے ایک عوامی تحریک بنایا جائے۔ وزیر اعظم کی تقریر کے دوران ایک تعجب خیز بات وہاں امریکی صدر ڈونل ٹرمپ کی موجودگی تھی۔ صدر ٹرمپ جناب مودی اور جرمنی کی انجیلا مرکل کی تقریریں سننے کے بعد وہاں سے روانہ ہو گئے۔ اگر چہ وزیر اعظم نریندر مودی ماحول کے تحفظ کے علم بردار ہیں تو صدر ٹرمپ اس کے بر عکس ۔ یہی وجہ ہے کہ بر سر اقتدار آنے کے بعد انہوں نے پیرس معاہدے سے امریکہ کو علیحدہ کر لیا تھا ۔ اسی دوران آب و ہوا میں تبدیلی کے خلاف آواز اٹھانے والی نو عمر بچی گریٹا تھنبرگ نے اس مسئلہ سے نمٹنے کے لئے مناسب کارروائی نہ کرنے کے لئے عالمی رہنماؤں کی مذمت کی۔ سویڈن سے تعلق رکھنے والی اس بچی نے سر براہ کانفرنس میں موجود عالمی رہنماؤں سے کہا کہ آپ نے ہمارے خواب چرا لئے ہیں۔اس وقت مجھے یہاں نہیں بلکہ اپنے اسکول میں ہونا چاہئے تھا لیکن یہ سب آپ کی وجہ سے  ہے،آپ کی کھوکھلی باتوں کی وجہ سے ہم نے اپنا بچپن کھو دیا ہے۔

 

بالا کوٹ میں دہشت گردوں کی سرگرمی دوبارہ شروع، جنرل راوت کا بیان 

۔ فوج کے سر براہ جنرل بپن راوت نے کہا ہے کہ پاکستان نے بالا کوٹ میں دہشت گردوں کے کیمپ کو دوبارہ شروع کر دہا ہے جہاں سے تقریباً500 در انداز بھارت میں داخل ہونے کا انتظار کر رہے ہیں۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے نمایاں طور پر شائع کیا ہے ۔ اس خبر کو شہ سرخی کے ساتھ شائع  کرتے ہوئے روزنامہ دی اسٹیٹسمین تحریر کرتا ہے کہ چنئی کے آفیسرز ٹریننگ اکیڈمی میں نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کیمپ کے خلاف کارروائی اس کارروائی سے بھی زیادہ شدید ہو سکتی ہے جو فضائی حملے کی صورت میں فروری میں کی گئی تھی۔ انہوں نے کہا کہ فروری کے حملے سے بالاکوٹ میں کافی نقصان ہوا تھا جس کے سبب لوگ علاقہ چھوڑ کر کہیں اور چلے گئے ہیں اور اب دہشت گرد وہاں دوبارہ جمع ہونا شروع ہو گئے ہیں۔ دراندازی کا انتظار کر رہے دہشت گردوں کی تعداد کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں جنرل راوت نے کہا کہ موسم کی وجہ سے ان کی تعداد گھنٹی بڑھتی رہتی ہے لیکن یہ بات طے ہے کہ اس وقت وہاں کم سے کم 500 دہشت گرد موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ در اندازی کو روکنے کے لئے فوج نے مناسب قدم اٹھائے ہیں اور اس سلسلہ میں کنٹرول لائن پر مزید فوجیں تعینات کر دی گئی ہیں۔

 

دنیا کی نظروں سے بچنے کے لئے جیش محمد نے کیا نام تبدیل

۔ پاکستان کے دہشت گرد گروپ جیش محمد نے دنیا کی نظروں سے بچنے کے لئے اپنا نام بدل کر مجلس ورثاء شہدا جموں و کشمیر رکھ لیا ہے۔ اس خبر کو روزنامہ ہندوستان ٹائمز نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے ۔ اس واقعہ سے واقفیت رکھنے والے لوگوں کا حوالہ دیتے ہوئے اخبار لکھتا ہے کہ گروہ کے سر غنہ مسعود اظہر کے چھوٹے بھائی مفتی عبد الرؤف اصغر نے اس دہشت گرد تنظیم کا کنٹرول سنبھال لیا ہے ۔ عالمی دہشت گرد قرار مسعود اظہر اس وقت بہاول پور کے مرکز عثمان و علی میں بیمار پڑا ہوا ہے۔ بھارت میں انسداد دہشت گردی کی ایجنسیوں کے مطابق جیش ایک نئے نام کے ساتھ دو بارہ سامنے آیا ہے ۔ اس سے پہلے اسے خدام السلام اور الرحمت ٹرسٹ کے ناموں سے جانا جاتا تھا۔ مجلس ورثاء شہدا جموں و کشمیر کا پرچم وہی ہے جو جیش محمد کا تھا بس فرق یہ ہے کہ اس میں الجہاد کی جگہ الاسلام لکھ دیا گیا ہے ۔ قابل ذکر ہے کہ اس کے ایک رہنما مولانا عابد اختر نے بھارت ،امریکہ اور اسرائیل کے خلاف جہاد کی اپیل کی ہے۔

 

کشمیر معاملہ میں ثالثی کے لئے ٹرمپ کی دوبارہ پیش کش،عمران سے کہا مودی سے مل کر حل کریں معاملہ

۔ صدر امریکہ ڈونل ٹرمپ نے ایک بار پھر مسئلہ کشمیر پر بھارت اور پاکستان کے درمیان ثالثی کی پیش کش کی ہے۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے۔اس خبر کے حوالے سے روزنامہ ٹائمز آف انڈیا تحریر کرتا ہے کہ پاکستانی وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات کے دوران صدر ٹرمپ نے کہا کہ بہتر ہوگا کہ اسلام آباد اور نئی دہلی خود آپس میں بیٹھ کر یہ مسئلہ حل کر لیں۔ملاقات کے دوران عمران خان نے صدر ٹرمپ سے کشمیر معاملے میں مداخلت کرنے کی اپیل کی لیکن بھارت کا اس معاملہ میں کسی دوسرے ملک کو مداخلت کی اجازت نہ دینے کے باعث صدر ٹرمپ کو کہنا پڑا کہ ہندوستان اور پاکستان آپس میں مل بیٹھ کر یہ مسئلہ حل کر لیں۔ بعدمیں میڈیا کے لوگوں سے گفتگو کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان بخوبی سمجھتے ہیں کہ دہشت گردی سے موت اور غربت جنم لیتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کو ختم کرنا اب پاکستان کی ذمہ داری ہے۔

 

شادی کی تقریب کے مقام کے نزدیک سیکورٹی فورس کے حملے میں 40 افغان شہری ہلاک

۔ افغانستان کے ہلمند صوبے میں طالبان شدت پسندوں کے ایک ٹھکانے پر فوجی کارروائی کے دوران ہونے والی جھڑپ میں متصل گھر میں جاری شادی کی تقریب کے شرکا  بھی زد میں آ گئے جس کے نتیجہ میں کم از کم 40 شہری ہلاک ہو گئے۔اس خبر کو تمام اخبارات نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے ۔ اس خبر کے حوالے سے روزنامہ دی ہندو افغان حکام کا حوالہ دیتے ہوئے لکھتا ہے کہ موسیٰ قلعہ علاقہ میں طالبان شدت پسند خود کش حملہ آوروں کو تربیت دینے کے لئے ایک مکان کا استعمال کر رہے تھے ۔ اسی مکان سےمتصل مکان میں شادی کی تقریب چل رہی تھی تبھی یہ چھاپے مارے گئے ۔ صوبائی حکومت کے ذرائع نے بتایا کہ افغان فوجوں کی اس کارروائی میں 40 شہری مارے گئے۔

 

ایران کے ساتھ تعطل دور کرنے کے لئے امریکہ کا سفارتکاری پر زور

۔ امریکہ نے کہا ہے کہ وہ اس ہفتے اقوام متحدہ میں ایران کے خلاف معاملہ اٹھائے گا۔اس خبر کو روزنامہ دی اسٹیٹس مین نے نمایاں طور پر شائع کیا ہے ۔ اخبار لکھتا ہے کہ واشنگٹن نے زور دے کر کہا کہ وہ سفارتکاری کو کامیاب ہونے کے لئے ہر موقع دینا چاہتا ہے۔ اے بی سی(ABC )کے ساتھ ایک انٹرو یو میں امریکی وزیر خارجہ مائک پامپیو نے کہا کہ سعودی عرب میں تیل کی تنصیبات پر حملے کے جواب میں امریکہ کا ایران کے خلاف فوجی کارروائی کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ صدر ٹرمپ اور میں دونوں سفارتکاری کو کامیاب ہونے کے لئے ہر موقع دینا چاہتے ہیں ۔ تاہم انہوں نے متنبہ کیا کہ اگر سفارتکاری کامیاب نہیں ہوتی اور ایران اس طرح حملے کرتا رہتا ہے تو صدر ٹرمپ ضروری کارروائی ضرور کریں گے۔جناب پامپیو نے سعودی تیل تنصیبات پر کئے گئے حملے کو توانائی کی عالمی سپلائی پر تاریخ کا سب سے بڑا حملہ قرار دیا ہے۔ اسی دوران ایران نے کہا ہے کہ برطانوی ٹینکر جسے اس نے اپنے قبضہ میں لے لیا تھا ، اب واپس جانے کے لئے آزاد ہے۔ اس سے پہلے تقریباً ایک ماہ قبل برطانیہ نے بھی ایرانی ٹینکر کو رہا کر دیا تھا۔

 

برطانوی کمپنی تھامس کک ہوئی دیوالیہ،تمام پروازیں منسوخ

۔ سیاحت کے شعبہ سے تعلق رکھنے والی دنیا کی سب سے پرانی اور بڑی برطانوی کمپنی تھامس کک دیوالیہ ہو گئی ہے ۔ اس خبر کو تمام اخبارات نے جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے ۔ اس خبر کے حوالے سے روزنامہ ایشین ایج لکھتا ہے کہ اس اعلان کے بعد تمام پروازیں اور سیاحتی منصوبے منسوخ کر دیئے گئے ہیں جس کے سبب لاکھوں سیاح متاثر ہوئے ہیں۔178 سال پرانی کمپنی قرضوں میں ڈوبی ہوئی تھی اور اس کا کہنا ہے کہ بریگزٹ پر غیر یقینی صورتحال کے باعث حالیہ دنوں میں اس کی بکنگ میں کافی کمی آ گئی تھی۔لندن میں بینکوں ،قرض فراہم کرنے والے مالیاتی اداروں اور سرکاری نمائندوں کے ساتھ بات چیت نا کام ہونے کے بعد کمپنی نے دیوالیہ ہونے کا اعلان کیا۔ اس وقت تقریباً ڈیڑھ لاکھ افراد مختلف مقامات پر کمپنی کے فراہم کردہ ٹکٹ پر سیاحت کے لئے گئے ہوئے ہیں ۔برطانیہ کے شہری ہوا بازی کے محکمہ نے بتایا کہ طیاروں کا ایک دستہ تیار کیا گیا ہے جو مختلف مقامات پر پھنسے برطانوی سیاحوں کی واپسی کا عمل شروع کرے گا۔توقع ہے کہ یہ عمل دو ہفتوں میں مکمل ہو جائے گا۔