19.03.2020

دنیا میں کورونا متاثرین کی تعداد دو لاکھ مہلوکین کی تعداد آٹھ ہزار،پامپیو نے کورونا کے تعلق سے چین پر گمراہ کرنے کا عائد کیا الزام 

۔ پوری دنیا میں کورونا وائرس کی قہر سامانیاں جاری ہیں اور اس درمیان تازہ موصولہ اطلاعات مظہر ہیں کہ پورے عالم میں متاثرین کی تعداد دو لاکھ اور اموات کی تعداد آٹھ ہزار تک پہونچ گئی ہے۔صرف اٹلی میں ایک ہی دن میں مرنے والوں کی تعداد 475ہے۔ اس پس منظر میں روزنامہ ایشین ایج نے امریکہ کے وزیر خارجہ مائیک پومپیو کے حوالے سے خبر دی ہے کہ کووڈ-19 پھیلنے کی  ذمہ داری سے بچنے کے سلسلے میں چین نے گمراہ کن مہم چلائی تھی۔چین پر یہ الزام لگاتے ہوئے انہوں نے یہ بھی کہا کہ اب وقت الزامات و جوابی الزامات کا نہیں ہے بلکہ اس عالمی وباء سے نپٹنے اور امریکیوں اور تمام دنیا کے لوگوں کو اس جوکھم سے نکالنے کا ہے۔ اخبار کے مطابق نامہ نگاروں سے بات چیت کے دوران جب ان سے چین کے اس الزام کے بارے میں پوچھا گیا کہ امریکی فوج نے ووہان میں یہ وباء پھیلائی تھی تو انہوں نے کہا کہ چین اس وائرس کے سلسلے میں اپنی ذمہ داری سے بچتے ہوئے اس کا الزام دوسروں پر عائد کر رہا ہے۔ 

روزنامہ ہندوستان ٹائمز کی ایک خبر کے مطابق امریکی صدر ڈونل ٹرمپ نے چینی وائرس سے متعلق اپنے بیان کا دفاع کیا ہے اور کہا ہے کہ اس بیان سے ان کا مقصد چین کے اس جھوٹے پروپیگنڈے کا جواب دینا تھا کہ امریکی فوج ووہان میں پھیلنے والے اس وائرس کی ذمہ دار ہے۔ اس سفارتی لڑائی کو آگے بڑھاتے ہوئے چین نے بدھ کے روز خبردار کیا کہ اگر واشنگٹن نے اپنی غلطیاں درست نہیں کیں تو وہ امریکی ذرائع ابلاغ کے خلاف مزید کارروائی  کرے گا۔ چین کی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ یہ اس کے دائرہ کار میں ہے کہ وہ صحافیوں کو ملک بدر کر دے یا ان کو ہانگ کانگ یا مکاؤ سے کام نہ کرنے دے۔ اخبار لکھتا ہے کہ چین نے یہ تنبیہ اپنے اس فیصلے کے ایک دن بعد جاری کی ہے جس کے تحت اس نے نیویارک ٹائمز، واشنگٹن پوسٹ اور وال اسٹریٹ جرنل کے امریکی صحافیوں کو ملک بدر کیا تھا۔ خیال رہے کہ یہ انتقامی کارروائی امریکہ کے اس اقدام کے بعد کی گئی ہے جس کے تحت اس نے چین کے سرکاری میڈیا کو غیر ملکی مشنز قرار دیا تھا۔

کووڈ-19پر ورچوئل سربراہ کانفرنس کے لئے گروپ 20 نے منظور کی نریندر مودی کی تجویز 

۔ وزیراعظم نریندر مودی اور سعودی ولیعہد شہزادہ محمد بن سلمان کے درمیان ٹیلی فون پر بات چیت کے فوراً بعد سعودی عرب نے اعلان کیا ہے کہ وہ اگلے ہفتے جی20 ممالک کی ایک غیر معمولی ورچوئل سربراہ کانفرنس کے لئے ان ممالک کو مطلع کر رہا ہے تاکہ کووڈ-19 کی عالمی وباء کی روک تھام اور اس کے انسانی اور معاشی مضرات کے خلاف اشتراک کیا جا سکے۔ اس حوالے سے روزنامہ اسٹیٹس مین لکھتا ہے کہ سعودی ولی عہد سے اپنی بات چیت میں نریندر مودی نے کورونا وائرس سے پیدا چیلنجوں سے نپٹنے کے لئے گروپ20 کے رکن ممالک کے درمیان مشترکہ کوشش پر تبادلہ خیال کیا تھا۔ جس کی وجہ سے نہ صرف  لاکھوں افراد کو خطرہ لاحق ہو گیا ہے بلکہ معیشت پر بھی اس کے اثرات مرتب ہو رہے ہیں ۔ اس پس منظر میں وزیراعظم نے سارک ممالک کے درمیان ویڈیو کانفرنس کے انعقاد کے لئے ہندوستان کی پیش قدمی کا بھی ذکر کیا۔ دونوں رہنماؤں نے اس بات سے بھی اتفاق کیا کہ گروپ 20 کی سطح پر بھی اسی طرح کی ایک کوشش سود مند ثابت ہوگی تاکہ اس وائرس سے پیدا مشکلات سے نپٹنے کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال کیا جا سکے اور عالمی آبادی میں اعتماد سازی کی جا سکے۔

جموں و کشمیر میں آرٹیکل 370 کی تنسیخ کےبعد بدعنوانی کا خاتمہ : وزیر خزانہ 

۔ وزیر خزانہ نرملا سیتارمن نے کہا ہے جموں و کشمیر میں آرٹیکل 370 کے خاتمے کے بعد بدعنوانی کا خاتمہ ہوا ہے اور وہاں مزید شفافیت آئی ہے۔ اس حوالے سے روزنامہ پایونیئر نے تحریر کیا ہے کہ بدھ کے روزانہوں نے  لوک سبھا میں بتایا کہ اس کے اقدام کے بعد وہاں بہت سی مثبت تبدیلیاں آئی ہیں جن میں برآمدات میں اضافہ اور انتظامیہ میں شفافیت بھی شامل ہے۔ لوک سبھا میں حزب اختلاف کے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہ جموںو کشمیر کو ایک اوپن جیل میں تبدیل کر دیا گیا ہے، وزیر مملکت برائے داخلہ جی کشن ریڈی نے زور دے کر کہا کہ مرکز کے زیر انتظام نئے تشکیل کردہ علاقے کو سیاحوں کے لئے کھول دیا گیا ہے اور اس کے دروازے دہشت گردوں کے لئے بند کر دیئے گئے ہیں۔ اخبار کے مطابق انہوں نے مزید کہا کہ مودی حکومت ، نوجوانوں کے ہاتھوں میں پاکستانی پرچم اور پتھروں کے بجائے ترنگا اور کمپیوٹر دیکھنا چاہتی ہے۔ کشن ریڈی نے حزب اختلاف پر غلط اطلاعات پھیلانے کا بھی الزام لگایا اور کہا کہ سلامتی دستوں کے درمیان ہلاکتوں کی اموات میں کمی آئی ہے اور دہشت گردوں کے نیٹ ورکس ختم کر دیئے گئے ہیں۔ روزنامہ اسٹیٹس مین نے وزیر مملکت جتیندر سنگھ کے لوک سبھا میں دیئے گئے بیان کے حوالے سے تحریر کیا ہے کہ اگست میں آرٹیکل 370 کی تنسیخ کے بعد ملیٹنسی سے متاثرہ اس علاقے میں یہ آٹھ ماہ بے حد پُر سکون گزرے ہیں اور اس  علاقے کے براہ راست مرکز کے زیر انتظام آنے سے لوگوں کے خوابوں کی تعبیر سامنے آنے لگی ہے۔ 

امریکہ نے نئے آئی ایس سربراہ کو بلیک لسٹ میں کیا شامل 

۔ ‘‘امریکہ نے نئے آئی ایس سربراہ کو بلیک لسٹ میں کیا شامل ’’۔ یہ سرخی ہے روزنامہ ہندوستان ٹائمز کی ۔ اخبار کے مطابق امریکہ نے اسلامک اسٹیٹ گروپ کے نئے امیر محمد عبدالرحمن الموالی کو بلیک لسٹ میں شامل کر دیا ہے۔ وزیر خارجہ مائیک پامپیو نے منگل کے روز بتایا کہ اکتوبر میں امریکی کمانڈو کے حملے میں آئی ایس سربراہ ابوبکر البغدادی کی ہلاکت کے بعد الموالی کو نامزد کیا گیا تھا۔ اس سے قبل اس تنظیم نے ابوابراہیم الہاشمی القریشی کا نام سربراہ کے لئے پیش کیا تھا مگر امریکی عہدیداروں نے تسلیم کیا ہے کہ القریشی کےبارے میں بہت کم معلومات تھیں اور بعد میں انہوں نے خیال ظاہر کیا کہ اسلامک اسٹیٹ گروپ فرضی نام استعمال کر رہا ہے۔ اخبار آگے لکھتا ہے کہ الموالی اس سے قبل عراق میں القاعدہ میں سرگرم تھا اور وہ بے قصور یزیدی مذہبی اقلیتوں کی اذیت رسانی کے لئے کافی معروف تھا۔ پامپیو نے مزید کہا کہ امریکہ نے خلافت کو تباہ کر دیا ہے اور اب وہ آئی ایس آئی ایس کو پوری طرح ختم کرنے کے درپے ہے چاہے وہ کسی کو بھی اپنا سربراہ مقرر کرے۔

شام میں ترکی فوجیوں کی ہلاکت میں روس کا ہاتھ : پامپیو

۔ امریکہ نے پہلی بار روس کو شام میں ترکی فوجیوں کی ہلاکت کا ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔ اپنی خبر میں روزنامہ ایشین ایج نے تحریر کیا ہے کہ گذشتہ ماہ ادلب میں فضائی حملے میں 34 ترکی فوجی ہلاک ہوئے تھے حالانکہ انقرہ نے اس کے لئے شام کے صدر بشار الاسد کو مورد الزام ٹھہرایا تھا اور ماسکو کے ساتھ جنگ بندی معاہدہ کیا تھا۔ وزیر خارجہ مائیک پامپیو نے شام پر نئی پابندیوں کا اعلان کرتے ہوئے روس پر  ان ہلاکتوں کا الزام لگایا۔ خیال رہے باغیوں کو کچلنے کے لئے روس ایران کے ساتھ مل کر اسد کی حمایت کر رہا ہے۔ اخبار کے مطابق نامہ نگاروں سے گفتگو کرتے ہوئے پامپیو نے اس سلسلے میں کسی خاص واقعے کی طرف اشارہ نہیں کیا لیکن یہ بھی کہا کہ وہ اپنے ناٹو اتحادی ترکی کے شانہ بشانہ کھڑا ہے اور تشدد کے خاتمے تک وہ ترکی حمایت میں نئے اقدامات کرتا رہے گا۔ خیال رہے کہ ترکی فوجیوں کی ہلاکتوں کے انتقام میں درجنوں شامی فوجیوں کو ہلاک کردیا گیاتھا اور ترکی صدر طیب اردگان نے اپنے روسی ہم منصب ولادیمیر پوتن کے ساتھ جنگ بندی معاہدے کے لئے ماسکو کا دورہ کیا تھا۔ معاہدے میں روس-ترکی مشترکہ پیٹرول بھی شامل تھی۔

 ڈیموکریٹک پرائمریز ؛ بائیڈن تین ریاستوں میں فاتح 

۔ امریکہ سے متعلق خبر میں روزنامہ انڈین ایکسپریس نے مطلع کیا ہے کہ منگل کے روز جوزف آر بائیڈن جونیر نے سینیٹر برنی سینڈرس کو تین اہم ریاستوں میں آسانی کے ساتھ شکست دے دی۔جس کے بعد سینڈرس کی واپسی کے امکانات معدوم ہو گئے ہیں۔ سابق نائب صدر بائیڈن نے فلوریڈا، الی نوئیس اور ایری زونا میں یہ فتح درج کی جس کے نتیجے میں سینڈرس پر اپنی مہم ختم کرنے اور ڈیموکریٹس کو بائیڈن کے پیچھے متحد ہونے کے لئے دباؤ میں اضافہ ہو گیا ہے۔ اسی اخبار کی ایک اور خبر کے مطابق امریکی صدر ڈونل ٹرمپ نے بھی فلوریڈا اورالی نوئیس کی ریپبلکن پرائمریز جیت لی ہیں اور اس طرح نومبر میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں ان کی نامزدگی کےامکانات بڑھ گئے ہیں۔ 

عراق میں نامزد وزیراعظم کے خلاف شیعہ سیاسی پارٹیاں متحد 

۔ اخبار ہند و عراق کے حوالے سے اپنی خبر میں رقمطراز ہے کہ وہاں منقسم شیعہ سیاسی پارٹیوں نے متحد ہو کر بدھ کے روز اس بات کا اشارہ دیا ہے کہ وہ وزارت عظمیٰ کے لئے نامزد عدنان الزرفی کی مخالفت کریں گی۔ خیال رہے کہ 54 سالہ قانون ساز اور نجف کے سابق گورنر کو منگل کے روز عراق کی وزارت عظمیٰ کے لئے نامزد کیا گیا تھا۔ رخصت پذیر وزیراعظم عدیل عبدالمہدی کا جانشیں منتخب کرنے کے لئے یہ دوسری کوشش ہے۔ اخبار آگے لکھتا ہے کہ متعدد شیعہ بلاک پہلے ہی اپنی ناراضگی کا اظہار کر چکے ہیں۔