30.07.2020

1۔ رافیل طیاروں کی پہلی کھیپ کی ہندوستان آمد، حکومت نے قرار دیا فوجی تاریخ میں ایک نئے دور کا آغاز

1۔ آج ملک کے تمام اخبارات نے فرانس سے پانچ رافیل طیاروں کی پہلی کھیپ ہندوستان پہونچنے کی خبر کو جلی سرخیوں کے ساتھ شائع کیا ہے۔ روزنامہ انڈین ایکسپریس کے مطابق، حکومت ہند نے اس کو اپنی فوجی تاریخ کے ایک نئے دور سے تعبیر کیا ہے۔ اس پہلی کھیپ میں دو تربیتی اور تین سنگل سیٹر طیارے شامل ہیں ۔یہ ملٹی رول جنگی طیارے بدھ کے روز امبالا ایر بیس پہونچے جہاں فضائیہ کے سربراہ ایر چیف مارشل آر کے ایس بھدوریا اور مغربی فضائی کمان کے ایر آفیسر کمانڈنگ ان چیف، ایر مارشل بی سریش نے ان کا استقبال کیا۔ عالمی پیمانے پر ان طیاروں کو زبردست جنگی صلاحیت کا حامل سمجھا جاتا ہے۔ ۔ ان کا خیر مقدم کرتے ہوئے، اپنے ٹوئیٹ میں وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ قوم کی حفاظت سے بڑھ کر کوئی ‘‘پنیہ، وِرت یا تپسیا’’ نہیں ہوسکتی۔اپنے ٹوئیٹ میں وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ طیور بحفاظت امبالا پہونچ گئے ہیں۔اگر کسی کو ہندوستانی فضائیہ کی اس نئی 

صلاحیت سے تشویش ہوگی تو یہ وہ لوگ ہوں گے جو ملک کی علاقائی  سالمیت کونقصان پہونچانا چاہتے ہیں۔’’ اخبار لکھتا ہے کہ ان الفاظ کو چین کی طرف مبہم اشارہ سمجھا جارہا ہے۔ یہ پانچوں طیارے اگلے ماہ امبالا میں 17 اسکواڈرن المعروف گولڈن ایروز میں شامل کئے جائیں گے۔

2۔ ہند بحرالکاہل خطے میں ہندوستان ادا کرے گا اہم کردار: امریکہ اور آسٹریلیا

امریکہ اور آسٹریلیا نے کہا ہے کہ ہند بحر الکاہل خطے میں دونوں ممالک کے دفاعی تعاون اور ما بعدکووڈ صورت حال سے نپٹنے میں ہندوستان ایک اہم کردار ادا کرے گا۔اس خبر کے حوالے سے روزنامہ ہندوستان ٹائمس لکھتا ہے کہ امریکہ اورآسٹریلیا اس خطے کو محفوظ اور شمولیت پر مبنی بنانے کے لئے شراکت کا منصوبہ تیار کررہے ہیں۔ یہ معاملہ، امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر اور ان کے آسٹریلوی ہم منصبوں میرس پائنے  اورلنڈا رینالڈس  کے درمیان منگل کے روز واشنگٹن میں ایک ملاقات کے دوران زیر غور آیا۔ اس ملاقات کے بعد جاری مشترکہ بیان میں  ہند۔بحرالکاہل علاقے میں ہندوستان کے کردار کے حوالے سے کئی باتیں کہی گئیں۔ دونوں ممالک کے رہنماؤں نے ہند بحرالکاہل خطے میں چین کی حالیہ جبری اور استحکام کے لئے نقصان دہ سرگرمیوں پر شدید تشویش بھی ظاہر کی۔ دونوں ممالک نے یہ بھی کہا کہ اس وبا نے اپنے اسٹریٹجک مفادات کی تکمیل کے لئے کچھ ملکوں کو موقع فراہم کیا ہے۔ اخبار مزید رقم طراز ہے کہ یہ صورت حال ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب ہندوستان، آسٹریلیا کو مالابار مشقوں میں شامل کرنے کی تیاری کررہا ہے جس میں امریکہ اور جاپان بھی شامل ہوں گے اور جو چین کے ساتھ ایک ماہ طویل تعطل کے پس منظر میں کی جائیں گی۔  مشترکہ بیان کے مطابق، ہند بحرالکاہل خطہ ان کے اتحاد کا مرکز رہے گا اور دونوں ممالک آسیان، ہندوستان،جاپان،  جمہوریہ کوریا اور فائیو آئیز پارٹنرس کے ساتھ مل کر قریبی تعلقات کو مستحکم کرنے کی سمت میں کام کررہے ہیں تاکہ ایک ایسے خطے کی بقا  قائم رکھی جاسکے جو محفوظ ہو، شمولیت پر مبنی ہو اور جہاں قانون کی حکمرانی ہو۔ 

3۔ وزیر اعظم مودی نے بینک سربراہان پر ایم ایس ایم ای کو قرضہ جات میں اضافے کے لئے دیا زور

وزیر اعظم نریندر مودی نے ملک کے اعلیٰ سرکاری اور نجی بینکوں کے سربراہان  اور غیربینکار رہنماؤں سے کہا ہے کہ وہ  کووڈ وبا سے پیدا ابتر صورت حال کے پیش نظر مائیکرو، چھوٹے اور اوسط درجے کی صنعتوں نیز زراعت کے شعبے کے لئے قرضہ جات کی مقدار میں اضافہ کریں۔اس حوالے سے روزنامہ ہندوستان ٹائمس لکھتا ہے کہ بدھ کے روز تین گھنٹے طویل ایک ویڈیو کانفرنس میں  قرض فراہم کار اداروں نے وزیر اعظم کو ممکنہ اقدامات کی ایک فہرست پیش کی جس میں  مالیہ کے اکتساب اور  قرضہ جات کی تیز رفتار ڈیجیٹل فراہمی کی ضرورت نیز زرعی و رہائشی شعبہ جات میں حکومت کے ذریعے اصلاحات کے نفاذ کی ضرورت کو اجاگر کیا گیا تھا۔ اخبار آگے رقم طراز ہے کہ منگل کے روز وزیر اعظم کے دفتر سےجاری ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ اس کانفرنس کے لئے جو موضوعات طے کئے گئے ہیں ان میں قرضہ جات اور ان کی فراہمی کے لئے موثر ماڈل، تکنالوجی کے ذریعے مالی تفویض اختیارات، نیز مالی شعبے کے استحکام اور بقا کے لئے دانشمندانہ اقدامات شامل ہیں۔

4۔ پاکستان میں توہین مذہب کے ملزم کا عدالت میں قتل

روزنامہ ہندوستان ٹائمس کی ایک خبر کے مطابق، پاکستان میں توہین مذہب کے ایک ملزم کو پیشاور کی ضلع عدالت کے اندر اس وقت گولی مار کر ہلاک کردیا جب وہ اپنے مقدمے کی سماعت کا انتظار کررہا تھا۔ قاتل نے ہی ملزم کے خلاف مقدمہ درج کرایا تھا۔ملزم طاہر احمد نسیم، احمدیہ فرقے کا رکن تھا اور اس نے اپنے پیغمبر ہونے کا اعلان کیا تھا جو پاکستان میں توہین مذہب قانون کی خلاف ورزی سمجھا جاتا ہے۔ واضح ہو کہ اس قانون کے تحت مختلف جرائم کے لئے سزائے موت تک کا التزام ہے۔

5۔ جموں کشمیر میں پاکستان کی بلااشتعال فائرنگ میں فوج کا قلی ہلاک، دراندازی کی کوشش میں دو ملٹنٹ بھی کئے گئے ہلاک

اسی اخبار کی ایک اور خبر کے مطابق، جموں و کشمیر میں کنٹرول لائن پر فائرنگ کے دو علیحدہ علیحدہ واقعات میں فوج کا ایک قلی اور دو درانداز ہلاک ہوئے ہیں۔ سری نگر میں فوج کے ایک ترجمان کے مطابق، پاکستان نے بدھ کی سہ پہر کو کنٹرول لائن پر بارہمولا کے اڑی سیکٹر میں مارٹرس اور دیگر اسلحہ جات سے بلا اشتعال فائرنگ کرکے  جنگ بندی کی خلاف ورزی کی جس میں فوج کا ایک قلی زخمی ہوگیا۔ بعد میں وہ زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا۔ اس بلا اشتعال فائرنگ کا ہندوستانی فوج نے منہ توڑ جواب دیا۔ اخبار دوسرے واقعے کے حوالے سے لکھتا ہے کہ  فوج نےراجوری ضلع کے نوشیرا سیکٹر میں دراندازی کی ایک کوشش کو ناکام بنادیا۔ ایک عہدیدار کے مطابق، لوگوں کے ایک گروپ کو فوج نے ہندوستانی خطے میں گھسنے کے کوشش کے دوران روکا  اور خود سپردگی کے لئے کہا تو اس گروپ نے فوج پر فائرنگ شروع کردی۔ جس کا فوج نے بھی جواب دیا۔ اخبار آگے لکھتا ہے کہ اسی دوران، دومسلح ملٹنٹ جب ایک ایسے مقام پر پہونچے جہاں زیر زمین بارودی سرنگ بچھائی گئی تھی تو وہاں دھماکہ ہوا جس کے بعد، فوج کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں یہ دونوں ملٹنٹ ہلاک ہوگئے جبکہ جائے تصادم سے ایک زخمی ملٹنٹ فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا۔

6۔ ایران اور امریکہ درمیان کشیدگی میں اضافہ، واشنگٹن نے کہا مصنوعی امریکی جنگی جہاز کوتباہ کرنے کی کارروائی قابل مذمت

‘‘ ایران اور امریکہ درمیان کشیدگی میں اضافہ، واشنگٹن نے کہا مصنوعی امریکی جنگی جہاز کوتباہ کرنے کی کارروائی قابل مذمت ۔’’ یہ سرخی ہے روزنامہ راشٹریہ سہارا کی۔خبر کے مطابق، امریکہ نے آبنائے ہرمز میں مصنوعی ڈرل کے دوران، امریکی طیارہ بردار جہاز کے نمونے کو تباہ کئے جانے کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ ایران کا یہ رویہ غیر ذمہ دارانہ  اور دیدہ دلیری پر مبنی ہے جس کے ذریعے اس نے  امریکہ پر دباؤ ڈالنے کو کوشش کی ہے۔ ایران نے یہ اقدام ایسے وقت اٹھایا ہے جب دونوں ملکوں کے تعلقات کشیدہ ہیں۔ خیال رہے کہ ایران نے منگل کے روز فرضی مشق کے دوران امریکہ کے ڈمی طیارہ بردار جہاز کو میزائل کے ذریعے تباہ کردیا تھا۔ اخبار نے عالمی خبر رساں ادارے کے حوالے سے مزید تحریر کیا ہے کہ خلیج اومان اور خلیج فارس کے درمیان آبنائے ہرمز میں ایرانی پاسداران انقلاب کی فوجی مشقوں کا سلسلہ جاری ہے۔ایران کے حوالے سے ہی ایک خبر میں  روزنامہ ہندو نے تحریر کیا ہے کہ پاسداران انقلاب نے بدھ کے روز،حساس خلیج کے قریب فوجی مشقوں کے دوران زمین کے اندر سے میزائل فائر کئے ہیں۔ یہ فائرنگ، آبنائے ہرمز میں امریکہ کے ڈمی طیار بردار کو تباہ کئے جانے ایک روز بعد کی گئی ہے۔

7۔ زلمے خلیل زاد نے عید کے موقعے پر افغانستان میں جنگ بندی کا کیا خیر مقدم

  روزنامہ راشٹریہ سہارا کے مطابق، افغانستان کے لئے خصوصی امریکی ایلچی زلمے خلیل زاد نے عیدالاضحیٰ کے موقعے پر طالبان اور افغان حکومت کی جانب سے جنگ بندی کے اعلان کا خیر مقدم کیا ہے۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک بیان میں زلمے خلیل زاد نے  جنرل ملر، امریکی سفیر اور اپنی طرف سے افغانیوں کو عید کی مبارک باد بھی دی اور امید ظاہر کی کہ یہ تیوہار، افغان عوام کو پائیدار امن کے اور قریب لائے گا۔انھوں نے اظہار تشکر کرتے ہوئے اس خواہش کا بھی اظہار کیا کہ افغان افواج شہریوں کی خدمات جاری رکھیں گی۔ اسی اخبار کی ایک اور خبر کے مطابق، ترک پارلیمان نے سوشل میڈیا پر کنٹرول حاصل کرنے کے لئے ایک قانون کی منظوری دی ہے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ترکی کی پارلیمان نے بدھ کے روز اس قانون کو منظور کیا جس کے تحت  حکام کو سینسر شپ کے بجائے سوشل میڈیا کو ریگولیٹ کرنے کے غیر معمولی اختیارات حاصل ہوں گے۔