شہری مراکز میں سرمایہ کاری کےلئےوزیراعظم کی اپیل 

کووڈ۔19 کے بعد کی دنیا میں ہندوستان ان چند ملکوں میں سے ایک ہوگا جو معاشی ترقی کی روشن مثال ہوں گے۔اسوقت آئندہ مالی سال میں ملک کی معیشت کے بارے میں کافی مثبت اندازے لگائے جارہے ہیں۔

وزیراعظم نریندر مودی نے بلوم برگ نیو اکونامی فورم  کےتیسرے سالانہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سرمایہ کاروں سےہندوستان میں سرمایہ کاری کرنے کی اپیل کی۔ ہندوستان میں اس وقت تجارت کے لئے کافی عمدہ ماحول ہے۔ ملک میں مضبوط جمہوریت ہے۔ یہ سرمایہ کاروں کے لئے ایک بہت بڑا بازار ہے۔ یہاں ایک ایسی حکومت ہے جو سرمایہ کاروں کا کافی خیال رکھتی ہے۔ اس لئے سرمایہ کاروں اور تجارت کرنے والوں کو اچھی تجارت کرنے اور اچھا منافع کمانے کے لئے ہندوستان ایک بہترین مقام ہے۔ اس تناظر میں وزیراعظم کی سرمایہ کاروں سے کی گئی اپیل بروقت ہے۔ 

اب یہ نقل وحرکت کامعاملہ ہو یا شہرکاری اور اختراع کا، ہرشعبہ میں ہندوستان سرمایہ کاروں کو بہترین مواقع فراہم کرتا ہے۔ فورم سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ کورونا وائرس کی وبا نے ثابت کردیا ہے کہ شہری علاقےجو ترقی کی بنیاد ہوتے ہیں اور جن پر ترقی منحصر کرتی ہے، اس وبا سے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔لیکن کووڈ۔19کے منفی اثرات کا مزیدذکر کئے بغیر انہوں نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ وبا میں بھی مواقع کیسے تلاش کئے جاسکتے ہیں، ایسے مواقع جو ترقیاتی مقاصد کے حصول کے لئے راہ ہموار کرسکیں۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ کورونا وائرس کی وبا نےتمام دنیا میں زبردست تباہی مچائی ہے۔ اس سے کھیل کود، سیاحت اور تفریحی سرگرمیاں سبھی متاثر ہوئیں۔ لوگوں کا آپس میں ملنا جلنا مشکل ہوگیا۔آج وہ صورتحال نہیں ہے جوکووڈ۔19 کے وجود میں آنے سے پہلے تھی۔ لیکن سوال یہ ہے کہ زندگی کوراستے پر دوبارہ کیسے لایا جائے۔ اس بارے میں وزیراعظم کاجواب بالکل صاف اور واضح تھا۔ انہوں نے کہا کہ شہری علاقوں میں دوبارہ جان ڈالنے سے چیزیں دوبارہ شروع ہوسکتی ہیں۔ لیکن اس کے لئے ذہنیت میں تبدیلی لانا ضروری ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ کووڈ۔19 کے بعد کی دنیاکو ہر چیز نئے سرے سے شروع کرنا ہوگا اور یہ تب تک ممکن نہیں ہوگا جب تک کام کرنے کےطریقوں کو دوبارہ درست نہ کیا جائے۔ یہ تمام باتیں کہہ کر جناب مودی ہندوستان میں سرمایہ کاری کے مواقع کی جانب سرمایہ کاروں کی توجہ مبذول کرانے کی کوشش کر رہے تھے جو ملک کے شہری علاقوں میں خاص طور پر اسمارٹ سٹیزمیں بے انتہا موجود ہیں۔

وزیراعظم کے خیال میں کووڈ۔19نے کوشہروں کو عوام کے لئے خوبصورت اور قابل رہائش بنانے کےلئے  حکومتوں کو کافی مواقع فراہم کیے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس وقت ایسے شہر بنانے کی ضرورت ہے جہاں کی آب وہواصاف ستھری ہو۔ انہوں نے مزید کہا کہ وہ ایک ایسے مستقبل کی طرف دیکھ رہے ہیں جہاں تعلیم اور صحت سے متعلق زیادہ تر کام آن لائن ہوں گے۔ شاپنگ بھی زیادہ تر آن لائن ہی ہوگی۔ لیکن اسی کے ساتھ ساتھ انہوں نے کہا کہ ان کی خواہش ہےکہ مستقبل میں ایک ایسا ہندوستان ہو جہاں کے شہری مراکز کو شہروں جیسی تمام سہولیات حاصل ہوں لیکن ان کا جذبہ ایک گاؤں جیسا ہو۔ بلاشبہ وزیراعظم کی اس خواہش کا خاص مقصد ممکنہ سرمایہ کاروں کو، ہندوستان کےشہری علاقوں میں موجود مواقع سے باخبر کرناتھا جہاں گزشتہ چند برسوںمیں ترقی کے کافی مواقع پیدا کئے گئے ہیں۔

ڈیجٹیل انڈیا، اسٹارٹ اپ انڈیا، سستے مکانات، ریئل اسٹیٹ ریگولیشن ایکٹ  اور 27 شہروں میں میٹرو ریل نے ملک کے شہری علاقوں کی تصویر بدلنے میں کافی مدد کی ہے۔ اب 2022تک ملک میں تقریباً ایک ہزار کلو میٹر کا میٹرو نظام تیار کرنے کا ہدف ہے۔ اس طرح کی پہل کے دو مقاصد ہیں۔ پہلا، شہری علاقوںمیں روزگار کے مواقع پیدا کرنا اور دوسرا شہروں کو جدید ترین، صاف ستھرا اور پرکشش بنانا ہے۔

ممکنہ سرمایہ کاروںمیں یہ پیغام پہنچانے کے لئے کہ اسمارٹ سٹی پروجیکٹس غیر موثر نہیں ہیں بلکہ ان پر اچھا کام چل رہا ہے، وزیر اعظم نے کہا کہ ان اسمارٹ سٹیز نے تقریباً دو لاکھ کروڑ روپے مالیت کے پروجیکٹ تیارکئے ہیں۔جناب مودی نے کہا کہ ان کی حکومت شہر کاری کے شعبہ میں ہندوستان کو نئی اونچائیوں تک لے جانےکےلئےپابند عہد ہے۔ 

غریبوں کے لئے مکانات کی تعمیر، پبلک ٹرانسپورٹ کی جدید کاری اور شہری علاقوں میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی جیسے کام پہلے سے جاری ہیں۔ مکانات اور شہری معاملات کی وزارت کے مطابق ملک کو 2030تک ہر سال 800ملین مربع میٹر زمین کو ڈیولپ (develop)کرنا ہوگا تاکہ ان لوگوں میں سے40 فیصد آبادی کو مکانات مہیا کرایا جاسکے جن کے ہندوستانی شہروںمیں آکر  بسنے کی امید ہے۔