14.01.2021

امریکی ایوان نمائندگان میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف ایک بار پھر منظور ہوئی مواخذے  کی  تحریک

  امریکی  ایوان  نمائندگان  نے  گھنٹوں  کی  بحث  کے  بعد  صدر  ڈونلڈ  ٹرمپ  کے  خلاف  مواخذے  کی  تحریک  کو  منظوری  دے  دی  ہے۔  اس  طرح  ٹرمپ  پہلے  ایسے  امریکی  صدر  بن  گئے  ہیں  جسے  اپنی  مدت  کار  میں  دو  بار  مواخذے  کی  تحریک  کا  سامنا  کرنا  پڑا  ہے۔  مواخذے  کی  تحریک  کے  لئے  ہوئی  ووٹنگ   کے دوران 232 اراکین نے مواخذے کے حق میں جبکہ 197 نے اس کے خلاف رائے  دہی  کی۔ اہم  بات  یہ  ہے  کہ  ری-پبلکن  پارٹی  کے  دس  اراکین  نے  بھی  ٹرمپ  کے  خلاف  اور  مواخذے  کے حق  میں اپنے  ووٹ  ڈالے۔  یہ  اور  بات  ہے  کہ  ایوان  نمائندگان  میں  ڈیموکریٹسکو اکثریتحاصل  ہے۔  ڈونلڈ  ٹرمپ  پر  الزام  ہے  کہ  انھوں  نے  گزشتہ  ہفتے  اپنے  حامیوں  کو  پرتشدد  مظاہرے  اور  بغاوت  پر  اکسایا  تھا  جس  کے  نتیجے  میں نومنتخب صدر جو بائیڈن کی فتح کی توثیق کے لیے سینیٹ میں ہونے والے ووٹنگ کے دوران امریکی  راجدھانی  میں  ان  کے  حامیوں  نے  کیپٹل  ہل (Capitol Hill )پر  ہلہ  بول  دیا  تھا ۔  نتیجتا  ایک  خاتون  سمیت  کم  از  کم  پانچ  افراد  ہلاک  اور  درجنوں  زخمی  لوگ  زخمی  ہو  گئے  تھے۔  دی  نیویارک  ٹائمس  نے  لکھا  ہے  کہ  ڈونالڈ ٹرمپ  کے  خلاف  مواخذے  کی  تحریک  کو  ایوان  نمائندگان  نے  ایسے  وقت  منظوری  دی  ہے  جب  ان  کے  عہدے  سے  سبکدوش  ہونے  میں  محض  ایک  ہفتہ  باقی  ہے ۔  خیال  کیا  جا  رہا  ہے  کہ  سینیٹ  میں  مواخذے  کے  ٹرائل  سے  قبل  ہی  ٹرمپ  وہائٹ  ہاؤس  کو  خیرآباد  کہہ  دیں  گے۔ ٹرمپ  کی  مدت  کار  20  جنوری  کو  ختم  ہو  رہی  ہے۔

امریکہ  میں  ایچ  -ون  ویزا  پر  کام  کرنے  والے  غیرملکیوں  اور  گرین  کارڈ  یافتگان  کی  تنخواہوں  میں  اضافے  کی  تجویز

  امریکی  وزارت  محنت  نے  ایچ-ون  بی (H-1B ) ویزا  کے  حاملین  اور  گرین  کارڈ  یافتگان  کو  ملنے  والی  تنخواہوں  کے  سلسلے  میں  حتمی  ضوابط  کا  اعلان  کیا  ہے۔  ٹائمس  آف  انڈیا  کی  خبر  کے  مطابق  ٹرمپ  انتظامیہ  20  جنوری  کو  جو  بائیڈن  کی  حلف  برداری  سے  قبل  اپنے  ایجنڈوں  کو  عملی  جامہ  پہنانے  میں  کوئی  کور  کسر  نہیں  چھوڑنا  چاہتی  ہے۔  اسی  سلسلے  میں  ایک  قدم  آگے  بڑھاتے  ہوئے  امریکہ  کی  وزارت  محنت  نے  ایچ-  ون  بی  ویزا  پر  کام  کرنے  والوں  یا  روزگار  کے  لئے  گرین  کارڈ  یافتہ  لوگوں  کی  تنخواہوں  میں  اضافہ  کرنے  کا  اعلان  کیا  ہے۔  14  جنوری  کو  فیڈرل  رجسٹر  میں  شائع  ہونے  والا  یہ  ضابطہ  ٹرمپ  انتظامیہ  کے  ذریعہ  ان  غیرملکی  ملازمین  کی  تنخواہوں  میں  اضافہ  کرنے  کی  دوسری  کوشش  ہے  جو  ایچ-  ون  بی  یا  گرین  کارڈ  کے  ساتھ  امریکہ  میں  برسرروزگار  ہیں۔  اس  سے  پہلے  گزشتہ  سال  اکتوبر  میں  امریکی  عدالت  کے  فیصلے  کے  بعد  ٹرمپ  انتظامیہ  نے  غیرملکی  ملازمین  کی  تنخواہوں  میں  اضافے  کے  لئے  ضابطوں  کا  اعلان  کیا  تھا۔

بھارت  چین  سے  نمٹنے  اور  ہند  پیسفک  خطے  میں  امریکہ  کے  لئے  اہم  شراکت  دار

  بھارت  چین  سے  نمٹنے  اور  ہند  پیسفک  خطے  میں  امریکہ  کے  لئے  اہم  شراکت  دار  کی  حیثیت  رکھتا  ہے۔  دی  انڈین  ایکسپریس  میں  شائع  ایک  خبر  کے  مطابق رخصت  پذیر  ٹرمپ  انتظامیہ  نے  ایسے  دستاویزات  عام  کئے  ہیں  جن  میں  ہند  پیسفک  خطے  میں  امریکہ  کے  ساتھ  بھارت  کی  شراکت  داری  اور  اس  کی  اہمیت  کو  اجاگر  کیا  گیا  ہے۔  اس  میں  یہ  بھی  کہا  گیا  ہے  کہ  ایک  مضبوط  و  مستحکم  بھارت  خطے  کے  مثبت  نظریات  کے  حامل  ممالک  کے  ساتھ  چین  کو  کاؤنٹر  بیلنس  (counterbalance) کرنے  میں  اہم  کردار  ادا  کر  سکتا  ہے۔  ان  دستاویزات  میں  نئی  دہلی  کو سیکورٹی سے  متعلق امور  میں  واشنگٹن  کا  ترجیحی  شراکت  دار  قرار  دیا  گیا  ہے۔  اس  کے  مطابق  بھارت  جنوبی  ایشیا  کا  ممتاز  ملک  ہونے  کے  ساتھ  بحرہند  میں  سیکورٹی  برقرار  رکھنے میں  قائدانہ  رول  ادا  کر  رہا  ہے۔   ان  میں  یہ  بھی  یہ  بھی  کہا  گیا  ہے  کہ  بھارت  خطے  میں  دیگر  امریکی  حلیفوں  اور  شراکت  داروں  کے  ساتھ  اپنے  اقتصادی،  دفاعی  اور  سفارتی  تعاون  میں  اضافہ  کر  رہا  ہے۔  امریکہ  نے  ان  دستاویزات  میں  اس  بات  کا  اشارہ  بھی  دیا  ہے  کہ  وہ  سفارتی،  فوجی  اور  انٹیلیجنس  سمیت  مختلف  شعبوں  میں  اقدام  کرتے  ہوئے  بھارت  کو  اپنے  بڑے  دفاعی  شراکت  دار  کے طور  پر  مزید  مستحکم  کرنے  میں  اپنا  تعاون  پیش  کرے  گا  تاکہ  چین  سے  سرحدی  اور  آبی  تنازعات  کو  حل  کرنے  میں  بھی   بھارت  کو آسانی  ہو۔  امریکی  کاغذات  میں  کہا  گیا  ہے  کہ  ایک  مضبوط   فوج  کے  ساتھ  بھارت  کی  شراکت  داری  خطے  میں  دونوں  ملکوں  کے  باہمی  مفادات  کے  حق  میں  ہے۔  امریکہ  نے  نیوکلیئر  سپلائرس  گروپ  کی  ممبرشپ کے  سلسلے  میں  بھارت  کے  موقف  کی  حمایت  کرنے اور  ایسٹ  ایشیا  سمٹ  (East Asia Summit)  میں  اس  کے  قائدانہ  کردار کا  اعتراف  کرنے  کی  بھی  بات  کہی  ہے ۔  ساتھ  ہی  بھارت  کی  داخلی  اقتصادی  اصلاحات  کی  حمایت  کا  عندیہ  بھی  دیا  ہے۔  

بھارت  کے  قومی  سلامتی  مشیر  اجیت  ڈوبھال  کی  افغان  رہنماؤں  سے  بات  چیت

بھارت  کے  قومی  سلامتی  مشیر  اجیت  ڈوبھال  نے  ایک  اعلی  سطح  کے  وفد  کے  ساتھ  افغانستان  کے  اپنے  دو  روزہ  دورے  کے  دوران  کابل  میں  افغان  رہنماؤں  کے  ساتھ  سلامتی  سے  متعلق  امور  پر  بات  چیت  کی۔  دی  ہندو  نے  لکھا  ہے  کہ  امریکہ  میں  جوبائیڈن  انتظامیہ  کی  آمد  سے  قبل  ڈوبھال  کا  افغانستان  دورہ  ہوا  ہے۔  افغانستان  کی  قومی  سیکورٹی  کونسل  کے  مطابق  دوںوں  ملکوں  کے رہنماؤں  کے  درمیان  دہشت  گردی  کو  شکست  دینے  اور  امن  عامہ  کی  بحالی  کی  کوششوں  کو  بڑھانے  کے  ساتھ   ہی  باہمی اسٹرٹجک  مفادات  کے  امور  پر  بات  چیت  ہوئی۔  بھارت  کے  قومی  سلامتی  مشیر  نے  افغان  صدر  اشرف  غنی  اور  اعلی  قومی  مصالحتی  کونسل  کے  چیئرمین  ڈاکٹر  عبداللہ  عبداللہ  سے  بھی  ملاقات  کی۔  بھارتی  نمائندہ  وفد  کے  ساتھ  ملاقات  کے  بعد  عبداللہ  عبداللہ  نے  سوشل  میڈیا  پر  کہا  کہ  امن  عمل،  افغانستان  میں  دوسرے  دور  کی  داخلی  بات  چیت  اور قیام  امن  کے  سلسلے  میں  بھارت  کے  کردار  پر  بات  چیت  ہوئی۔  اسی  طرح  صدر  اشرف  غنی  کے  ساتھ  قومی  سلامتی  مشیر اجیت  ڈوبھال  کی  بات  چیت  کے  بعد  افغان  سفارت  کار  طاہر  قادری  نے  کہا  کہ  دونوں  ملکوں  کے  رہنماؤں  نے  دہشت  گردی  کے  خلاف  لڑائی  میں  باہمی  تعاون  اور  افغان  امن  عمل  پر  علاقائی  اتفاق  رائے  مضبوط  کرنے پر  بات  چیت  کی۔  بھارت  کے  اعلی  سطح  کے  وفد  کا  دورہ  ایسے  وقت  ہوا  ہے  جب  افغان  نمائندوں  اور  طالبان  کے  دورمیان  گزشتہ  ہفتے  دوحہ  میں  شروع  ہوئی  دوسرے  دور  کی  بات  چیت  جنگ  بندی  کے  مسئلے  پر  تعطل  کا  شکار  ہوچکی  ہے۔  افغان  حکومت  کا  کہنا  ہے  کہ  پہلے  جنگ  بندی  پر  معاہدہ  ہونا  چاہئے  جب  کہ  طالبان  کا  مطالبہ  ہے  کہ  پہلے  افغانستان  میں  مستقبل  کے  حکومتی  خاکے  پر  بات  چیت  ہو۔مختلف  فریقوں  کے  درمیان تذبذب اس  وقت  مزید  بڑھ  گیا  جب  امریکہ  کے  خصوص  نمائندے  زلمے  خلیل  زاد    نے  ایک  عبوری  حکومت  کی  تشکیل  کے  امکان  کا  اشارہ  دیا۔  تاہم  بعد  میں  امریکی  حکام  کی  طرف  سے  وضاحت  کی  گئی کہ  امریکہ  کسی  عبوری  حکومت  کی  وکالت  نہیں  کر  رہا  ہے۔

ہند-پاک  سرحد  پر  ایک  اور  خفیہ  سرنگ  کے  انکشاف  سے  پاکستان  کے  ناپاک  عزائم  کا  پردہ  فاش

5۔   بھارت  کی  سیکورٹی  افواج  نے  ہند-پاک  سرحد  پر  پاکستانی  فوج  کے  ذریعہ  دہشت  گردوں  کو  بھارت  میں  داخل  کرنے  کے  لئے  بنائی  گئی  ایک  اور  خفیہ  سرنگ  کا  انکشاف کیا  ہے۔  ہندوستان  ٹائمس  نے  لکھا  ہے  کہ  پچھلے  نومبر  مہینے  میں  بھی  بھارتی  فوج  نے  اسی  طرح  کی  ایک  سرنگ  کا  پردہ  فاش  کیا  تھا۔  بھارتی  فوج  کا  کہنا  ہے  کہ  پاکستانی  فوج  کے  ذریعہ  تربیت  یافتہ  دہشت  گردوں  کو  جموں  و  کشمیر میں  داخل  کرانے  کے  لئے  یہ  سرنگیں  نہایت  منظم  انداز میں  بنائی  گئی  تھیں۔  بی  ایس  ایف  کا  کہنا  ہے  پاکستانی  فوج  نے  دراندازوں  کو  بھارت  میں  داخل  کرنے  کے  لئے  ایک  خصوصی  ٹیم  تشکیل  دے  رکھی ہے۔  نئی  دہلی  میں  انسداد  دہشت  گردی  افسران  کا  کہنا  ہے  کہ  یہ  سرنگِیں  خطے  میں  پاکستانی  رینجروں  کے  ذریعہ  کی  جانے  والی  جنگ  بندی  کی  خلاف  ورزیوں  کے  واقعات  کی  بھی  وضاحت  کرتی  ہیں۔  دراندازوں  کو  سرحد  پار  کرانے  میں  مدد  کے  طور  پر  اور  بھارتی  فوج  کا  دھیان  بھٹکانے  کے  لئے  پاکستانی  فوج  جنگ  بندی  کی  خلاف  ورزی  کا  سہارا  لیتی  ہے۔  انسداد  دہشت  گردی  کے  ایک  افسر  کے  مطابق  جن  جگہوں  پر  وہ  سرنگیں  بناتے  ہیں  وہاں  سے  فوج  کی  توجہ  ہٹانے  کے  لئے  بھی پاکستانی  فوج  اشتعال  انگیز  فائرنگ  کا  سہارا  لیتی  ہے۔جموں  و  کشمیر  پولس  کے  مطابق2019  کے  مقابلے  سال  2020  میں  پاکستان  کی  طرف  سے  جنگ  بندی  کی  خلاف  ورزی  کے  واقعات  میں  54  فیصد  کا  اضافہ  ہوا  ہے۔  مانا  جا  رہا  ہے  کہ  پاکستان  میں  اپوزیشن  جماعتوں  کی  سخت  نکتہ  چینی  اور  احتجاج  کو  دیکھتے  ہوئے  وزیراعظم  عمران  خان  اور  جنرل  قمر  باجوہ  کشمیر  پر  سیاست  کرنا  چاہتے  ہیں  اسی  لئے  ان  کا  پورا  زور  جموں  و  کشمیر  میں  حالات  کو  خراب  کرنے  پر  ہے۔

سری  لنکا  میں  ججوں  کو  بدعنوان  کہنے  پر  سابق  وزیر  کو  جیل

  سری  لنکا  میں  ججوں  کو  بدعنوان  کہنے  پر  سابق  وزیراور  یونائٹیڈ  نیشنل  پارٹی  کے  لیڈر  رنجن  راما  نائکے  کو  چار  سال  قید بامشقت کی  سزا  سنائی  گئی  ہے۔  تاہم  راما  نائکے  کا  دعوی  ہے  کہ  انھیں  ملک  میں  بدعنوانی  کے  خلاف  آواز  بلند  کرنے  کی  پاداش  میں  مشق  ستم  بنایا  جا  رہا  ہے۔  سری  لنکا  کے  سپریم  کورٹ  نے  سال2017  میں  ملک  کے  وزیراعظم  کی  سرکاری  رہائش  گاہ  کے  باہر  صحافیوں  کے  سامنے  راما  نائکے  کے  ذریعہ  کئے  گئے  تبصروں  کے  معاملے  میں  یہ  فیصلہ  سنایا  ہے۔ کورٹ  نے  اپنے  فیصلے  میں  کہا  ہے  کہ  اپوزیشن  لیڈر  کو  توہین  عدالت  کے  معاملے  میں  بھی  سزا  سنائی  گئی  ہے۔  راما  نائکے  میتری  پالا  سری  سینا  کی  حکومت  میں  نائب  وزیر  تھے۔  انھوں  نے  انسداد  بدعنوانی کے  اعلی  افسران  کے  ساتھ  ایک  میٹنگ  کے  بعد  ججوں  پر  بدعنوانی  کا  الزام  عائد  کیا  تھا۔  

ہانک  کانگ  میں  جمہوریت  حامی  کارکنوں  کے  خلاف  قانونی  چارہ  جوئی  کے  لئے  سینئر  برطانوی  وکیل  کا  تقرر

  ہانک  کانگ  میں  جمہوریت  حامی  کارکنوں  کے  خلاف  قانونی  چارہ  جوئی  کے  لئے  حکومت  نے  سینئر  برطانوی  وکیل ڈیوڈ  پیری  (David Perry)  کی  خدمات  لینے  کا  فیصلہ  کیا  ہے۔  ڈیوڈ  پیری  نے  بھی  رضامندی  ظاہر  کر  دی  ہے۔  وہ  اگلے  مہینے  جمہوریت  حامی  سینئر  میڈیا  اہلکار  73  سالہ  جمی  لائی  ( Jimmy Lai )  اور  آٹھ  دیگر  افراد  کے  خلاف  2019  میں  غیر  قانونی  اسمبلی  منعقد  کرنے  اور  حکومت  مخالف  احتجاج  کرنے  کے  معاملوں  میں  عدالت  کے  سامنے  حکومت  کا  موقف  رکھیں  گے۔  تاہم  برطانوی  سیاست  دانوں  نے  ڈیوڈ  پیری   کے  اس  فیصلے  کو  چیلنج  کر  دیا  ہے۔  واضح  رہے  کہ  چین  نے  ہانگ  کانگ  میں  قومی  سیکورٹی  قانون  نافذ  کرنے  کے  ساتھ  ہی  جمہوریت  حامی  افراد  کے  خلاف  کریک  ڈاؤن  شروع  کر  رکھا  ہے  اور  جمہوریت  حامی  سیکڑوں  افراد  کو  گرفتار  کر  لیا  گیا  ہے۔  چین  کی  اس  کارروائی  پر  عالمی  برادری  نے  بھی  سخت  تشویش  ظاہر  کی  ہے۔

***